اک نعرہِ مستانہ انالعشق انالعشق

رشید ندیم۔ ٹورانٹو کینیڈا

سب سے مرا یارانہ انالعشق انالعشق
کوئی نہیں بیگانہ انالعشق انالعشق 
اک روز مجھے دار پہ منصور نے پوچھا
تم نے مجھے پہچانا انالعشق انالعشق
ہر آنکھ ہے وارفتہِ نظارہ مجھے دیکھ
اے نرگسِ مستانہ انالعشق انالعشق
عاشق ہو کہ معشوق سبھی روپ ہیں میرے
ہو شمع کہ پروانہ انالعشق انالعشق
ہر ساجد و مسجود کا مَیں قبلہِ مقصود
مسجد ہو کہ بُت خانہ انالعشق انالعشق
میرے لئے گونجے سرِ مقتل ترے نعرے
اے جراتِ رندانہ انالعشق انالعشق
ہر آئینہ خانے میں مری جلوہ گری ہے
بستی ہو کہ ویرانہ انالعشق انالعشق
عکسِ رُخِ جاناں ہو کہ رقصِ دلِ بسمل
ہے میرا صنم خانہ انالعشق انالعشق
اے مجمعِ شوریدہ سَراں مل کے لگانا
اک نعرہِ مستانہ انالعشق انالعشق